ڈی سی راولپنڈی کیپٹن ریٹائرڈ انوارالحق نے ایپسما کے پانچ نکاتی مطالبات کا فوری نوٹس لیتے ہوئےرپورٹ طلب کرلی

0
45

راولپنڈی (ویب ڈسک) ڈپٹی کمشنر راولپنڈی کیپٹن ریٹائرڈ انوارالحق نے ایپسما کے پانچ نکاتی مطالبات کا فوری نوٹس لیتے ہوئے ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ہیڈ کوارٹر راولپنڈی ماہم آصف ملک کو معاملات کا جائزہ لے کر رپورٹ جمع کروانے کی ہدایت کردی۔
تفصیلات کے مطابق مورخہ 26 اکتوبر کو راولپنڈی ڈویژن کے صدر ابرار احمد خان کی قیادت میں ایک 20 رکنی وفد نے ڈپٹی کمشنر راولپنڈی کیپٹن ریٹائرڈ انوارالحق سے ان کے دفتر میں ملاقات کی ملاقات میں نجی تعلیمی اداروں سے متعلقہ پانچ نکاتی مطالبات پیش کیے گئے تھے۔ ڈپٹی کمشنر کی ہدایات پر ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ہیڈکواٹر ماہم آصف ملک نے آج اس حوالے ایک اہم اجلاس طلب کیا۔اجلاس میں پرائیویٹ سکولز کے فوکل پرسن اور ڈی ای او ایلمنٹری مشتاق احمد سیال ، ڈویژنل صدر ابرار احمد خان، ملک نسیم احمد، ابرار احمد ایڈووکیٹ، آغا شہاب، گل زبیر اور حفیظ الرحمٰن شریک ہوئے ۔ ابرار احمد خان نے مطالبات کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ اس وقت راولپنڈی ضلع میں سینکڑوں تعلیمی ادارے غیر رجسٹرڈ ہیں اور غیر قانونی طور پر کام کر رہے۔ حکومت کو کروڑوں روپے کا نقصان ہو رہا ہے۔ پنجاب پرائیویٹ ایجوکیشنل انسٹی ٹیوشن ایکٹ میں واضح طور پر ہدایات ہیں کہ ان کے خلاف کارروائی کی جائے لیکن محکمہ تعلیم خاموش ہے ۔ ان تمام غیر رجسٹرڈ تعلیمی اداروں کو قومی دھارے میں لا کے کروڑوں روپے کا ریونیو بچایا جا سکتا ہے ۔ ابرار احمد خان نے چیئرمین ڈسٹرکٹ رجسٹریشن اتھارٹی ڈپٹی کمشنر سے مطالبہ کیا کہ ان تعلیمی اداروں کو دو ماہ کا وقت دیکھ کر بغیر کسی جرمانہ کے رجسٹرڈ کر لیا جائے۔ ابرار احمد خان نے کہا کہ 2009 سے قبل جن تعلیمی اداروں کو مستقل رجسٹریشن الاٹ کی گئی تھی انہیں مت چھیڑاجائے ۔ ان اداروں کے مالکان کو پابند کیا جائے کہ محکمہ تعلیم کی طرف سے فراہم کردہ ضروری شرائط پر عمل درآمد کرتے ہوئے ہائجینک، بلڈنگ سر ٹیفیکیٹ اور محکمہ صحت کے فراہم کردہ ایس۔ او۔ پیز کو یقینی بنائیں۔ اگر محکمہ مستقل طور پر رجسٹرڈ تعلیمی اداروں کے حوالے سے کچھ نہیں کرتا تو آل پاکستان پرائیویٹ سکولز مینجمنٹ ایسوسی ایشن عدالت عالیہ سے اس معاملے میں رجوع کرے گی۔ ابرار احمد خان نے کہا کہ کووڈ 19 کے دوران فیصل آباد کے ڈپٹی کمشنر نے نجی تعلیمی اداروں کی رجسٹریشن میں ازخود تین ماہ کی توسیع دے دی تھی۔ ڈپٹی کمشنر راولپنڈی نجی تعلیمی اداروں کو ایک سال کی توسیع دینے کا اعلان کریں۔ ابرار احمد خان نے کہا کہ اسکول لیونگ سرٹیفکیٹ پر تصدیقی دستخط کے لیے لوگوں کو دور دراز کی تحصیلوں سے راولپنڈی آنا پڑتا ہے۔اس کے لیے ہر تحصیل کے ڈپٹی ڈی او کو دستخط کرنے کے اختیارات دے دیے جائیں یا یہ شرط ہی ختم کر دی جائے ۔ ابرار احمد خان نے مطالبہ کیا کہ جس وقت تک آن لائن رجسٹریشن سسٹم بحال نہیں ہوتا اس وقت تک تمام اسکولوں کی رجسٹریشن فائلز بغیر کسی جرمانہ کے مینول وصول کی جائیں۔ ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ماہم آصف ملک نے تمام مسائل کو بڑے تحمل سے سنا اور شرکاء کو یقین دلایا کہ ہم نجی تعلیمی اداروں کی مدد کے لئے یہاں بیٹھے ہیں۔ ان شاء اللہ تعالی قانون کے دائرے میں رہتے ہوئے جو مسائل حل طلب ہوئے انھیں ضرور حل کیا جائے گا۔ جلد ہی ڈپٹی کمشنر راولپنڈی کی زیر صدارت ڈسٹرکٹ رجسٹریشن اتھارٹی کا ایک اہم اجلاس طلب کیا جائے گا جس میں نجی تعلیمی اداروں کو درپیش مسائل کا جائزہ لیکر فوری فیصلے کیے جائیں گے۔ آخر میں واسا کے اہلکار نے نجی تعلیمی اداروں کو سینیٹائزر فراہم کرنے کے حوالے سے معلومات فراہم کیں۔

کوئی تبصرہ نہیں