نیوزی لیںڈ کا افغانستان سے مکمل فوجی انخلا کا اعلان

0
53
New Zealand announces complete troop withdrawal from Afghanistan
New Zealand announces complete troop withdrawal from Afghanistan

نیوزی لینڈ نے افغانستان سے رواں برس مئی میں اپنی فوج کے مکمل انخلا کا اعلان کردیا۔

دی گارڈین کی رپورٹ کے مطابق نیوزی لیںڈ کی وزیرِاعظم جسینڈا آرڈرن نے اعلان کیا کہ وہ افغانستان میں 20 سال سے جاری جنگ میں خدمات انجام دینے کے بعد وہاں تعینات اپنے باقی ماندہ فوجی اہلکاروں کو مئی میں واپس وطن بلارہی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ افغانستان میں نیوزی لینڈ ڈیفنس فورس (NZDF) کی 20 سال سے موجودگی کے بعد اب وقت آ گیا ہے کہ ہم بیرونِ ملک فوج کی تعیناتی ختم کریں۔

انہوں نے کہا کہ افغانستان کی اندرونی طاقتوں کے درمیان مذاکرات سے واضح ہوتا ہے کہ شورش زدہ ملک میں داخلی امن پائیدار سیاسی حل کے ذریعے ہی ممکن ہے۔ اس لیے افغانستان میں نیوزی لینڈ کی فوج کی مزید ضرورت نہیں۔

نیوزی لینڈ کی وزیرِ اعظم کی جانب سے افغانستان سے فوجی انخلا کا اعلان ایسے موقع پر سامنے آیا ہے جب بیلجئم کے دارالحکومت برسلز میں مغربی ملکوں کے عسکری اتحاد نیٹو کے وزرائے خارجہ کا اجلاس شروع ہورہا ہے۔

واضح رہے کہ 2001 میں افغان جنگ کے آغاز کے بعد سے نیوزی لیںڈ کے لگ بھگ 3ہزار 500 فوجی اہلکار وہاں خدمات پیش کرچکے ہیں جن میں اسپیشل فورسز کے علاوہ تربیت دینے والے ماہر افسران اور تعمیرِ نو کی ٹیمیں بھی شامل ہیں۔

گزشتہ چند برسوں میں نیوزی لینڈ نے افغانستان میں اپنے فوجیوں کی تعداد آہستہ آہستہ کم کی اور اب وہاں صرف 6 افراد خدمات انجام دے رہے ہیں جن میں 3 افغان ٹریننگ اکیڈمی اور 3 نیٹو ہیڈ کوارٹر میں تعینات ہیں۔

جسینڈا آرڈن کا کہنا ہے کہ افغانستان میں نیوزی لینڈ کی فورسز کی تعیناتی ہماری تاریخ کی طویل ترین تعیناتی ہے۔

اپنے فرائض کی انجام دہی کے دوران نیوزی لینڈ کے 10 فوجی ہلاک ہوئے جبکہ 3500 سے زائد اہلکاروں نے اس جنگ میں خدمات پیش کیں۔

کوئی تبصرہ نہیں